ملتان میں تھانے پر حملہ

Posted by on Jun 27, 2011 | Comments Off on ملتان میں تھانے پر حملہ

پاکستان میں چوبیس گھنٹوں کے دوران شدت پسندی کے دو واقعات میں پولیس کو نشانہ بنایا گیا ہے۔
ان واقعات میں آٹھ پولیس اہلکار ہلاک اور آٹھ ہی زخمی ہو گئے ہیں۔
اتوار کو صوبہ پنجاب کے جنوبی شہر ملتان میں ایک پولیس چوکی پر بم دھماکے میں تین پولیس اہلکار زخمی ہو گئے ہیں۔
اس واقع سے تقریبا بیس گھنٹے پہلے صوبہ خیبر پختونخوا کیکلِک جنوبی ضلع ڈیرہ اسماعیل خان کی تحصیل کلاچی میں تھانے پر نامعلوم مسلح افراد کے حملے اور اس کے بعد پانچ گھنٹے جاری رہنے والی لڑائی میں آٹھ پولیس اہلکار اور دو خود کش حملہ آور ہلاک جبکہ پانچ پولیس اہلکار زخمی ہو گئے تھے۔
کلِک شدت پسندوں کا نشانہ پولیس
پولیس پانچ گھنٹے تک مسلسل جاری رہنے والی لڑائی کے بعد تھانہ کا قبضہ دوبارہ حاصل کرنے میں کامیاب ہو سکی تھی۔
ڈپٹی انسپکٹر جنرل پولیس ڈیرہ اسماعیل خان سید امتیاز نے بی بی سی کے نمائندے عزیز اللہ خان کو بتایا تھا کہ مسلح افراد نے تھانے کے اندر گھس کر پولیس اہلکاروں پر فائرنگ کی اور دستی بم پھینکے جس میں ایس ایچ او اور ایڈیشنل ایس ایچ او سمیت آٹھ پولیس اہلکار ہلاک ہوگئے۔ جس وقت حملہ آور آئے اس وقت تھانے میں پندرہ اہلکار موجود تھے۔

اتوار کو ملتان میں پولیس پر ہونے والے حملے کے بارے میں ملتان کے ضلعی رابط افسر زاہد زمان نے ذرائع ابلاغ کو بتایا کہ پولیس چوکی پر جس وقت دھماکہ ہوا اس وقت وہاں پر پندرہ کے قریب اہلکار موجود تھے۔
زاہد زمان کے مطابق ایک موٹر سائیکل سوار شخص کے پولیس چوکی کے نزدیک آنے کے بعد یہ دھماکہ ہوا ہے۔
نامہ نگار عبادالحق کا کہنا ہے کہ ملتان پولیس کے سربراہ عامر ذوالفقار نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ دھماکے کے نتیجے میں تین سے چار پولیس اہلکار زخمی ہوئے ہیں۔
انھوں نے بتایا کہ ابھی تک دھماکے کی نوعیت کے بارے میں معلوم نہیں ہو سکا ہے اور اس ضمن میں تحقیقات شروع کی دی گئی ہیں۔

دھماکے کے بعد سکیورٹی اہلکاروں نے علاقے کو گھیرے میں لیلیا اور امدادی سرگرمیاں شروع کی گئیں۔
اس سے پہلے سال دو ہزار نو میں ملتان میں واقع خفیہ ادارے آئی ایس آئی کے دفتر کے قریب بم دھماکے میں کم از کم نو افراد ہلاک ہو گئے تھے۔
پاکستان میں دو مئی کو ایبٹ آباد میں القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کی امریکی فوجی آپریشن میں ہلاکت کے بعد سے پرتشدد واقعات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔
ان واقعات میں سکیورٹی فورسز کو متعدد بار شدت پسند حملوں میں نشانہ بنایا گیا۔
ان واقعات میں صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع چارسدہ میں ایف سی کے تربیتی مرکز کے باہر دو دھماکوں میں درجنوں اہلکاروں سمیت اسی افراد ہلاک ہوگئے۔
اس واقعے کے چند دن بعد کراچی میںکلِک  پاکستان بحریہ کے بیس پی این ایس مہران پر دہشتگردوں نے حملہ کر دیا۔
حکام کے مطابق چودہ گھنٹے سے زائد عرصے تک جاری رہنے والی اس کارروائی میں تیرہ سکیورٹی اہلکار ہلاک اور چودہ زخمی ہوئے۔
اس کے بعد پشاور میں متعدد بار پولیس چوکیوں پر شدت پسندوں نے حملے کیے۔
سکیورٹی فورسز کے علاوہ عوامی مقامات کو بھی شدت پسندوں نے کئی مرتبہ نشانہ بنایا ۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–