کراچی: علی موسیٰ گیلانی کی ضمانت منظور

Posted by on Jul 02, 2012 | Comments Off on کراچی: علی موسیٰ گیلانی کی ضمانت منظور

سندھ ہائی کورٹ نے کیمیکل کوٹہ کیس میں سابق وزیرِ اعظم سید یوسف رضا گیلانی کے بیٹے اور ممبر قومی اسمبلی علی موسیٰ گیلانی کی حفاظتی ضمانت منظور کر لی ہے۔

سندھ ہائی کورٹ کے جسٹس سید اظہر حسن رضوی نے دو ہفتوں کے لیے علی موسیٰ گیلانی کی حفاظتی ضمانت منظور کی ہے۔

انسداد منشیات کی فورس (اے این ایف) نے موسیٰ گیلانی پر ایک ایسے کیمیکل ایفیڈرین کی مبینہ غیر قانونی درآمد اور استعمال میں ملوث ہونے کا الزام عائد کیا ہے، جس کیمیکل سے ادویات کے علاوہ منشیات بھی تیار کی جا سکتی ہیں۔

سماعت کے بعد علی موسیٰ گیلانی کی وکیل شازیہ ہنجرا نے صحافیوں کو بتایا کہ حفاظتی ضمانت کے لیے یہ درخواست دائر کی گئی تھی تاکہ ان کے موکل راولپنڈی میں زیر سماعت مقدمے میں پیش ہو کر اپنا دفاع کر سکیں۔

“مجھے عدالت سے انصاف کی امید ہے۔ میرے والد نے بھی عدالت کا احترام کیا اور تین بار عدالت میں پیش ہوئے تاہم انہیں نااہل قرار دیا گیا۔ جنوبی پنجاب میں محرومیاں بڑھ رہی ہیں۔ میرے والد نے جب جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کی بات کی تو انہیں نا اہل قرار دیا گیا مگر جنوبی پنجاب صوبہ بن کر رہے گا۔”

علی موسی گیلانی

ضمانت منظور ہونے کے بعد موسیٰ گیلانی نے صحافیوں سے بات نہیں کی اور ایک سفید رنگ کی گاڑی میں سوار ہوکر چلے گئے بعد میں دوبارہ واپس آئے تو صحافیوں نے انہیں روک لیا۔

نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق علی موسیٰ گیلانی کا کہنا تھا کہ انہیں عدالت سے انصاف کی امید ہے، ان کے والد نے بھی عدالت کا احترام کیا اور تین بار عدالت میں پیش ہوئے تاہم انہیں نااہل قرار دے دیا گیا۔

جسٹس سید اظہر حسن رضوی نے اپنے چیمبر میں اس درخواست کی سماعت کی، جس کی وجہ سے صرف موسیٰ گیلانی کے وکیل اندر جا سکے، ضمانت منظور ہوتے ہی جیسے ہی وہ مسکراتے چہرے کے ساتھ کمرے سے باہر نکلے تو بعض کارکنوں نے جئے بھٹو کے نعرے لگائے جس پر عدالتی عملے نے انہیں ایسا کرنے سے منع کیا۔

علی موسیٰ کا کہنا تھا کہ جنوبی پنجاب میں محرومیاں بڑھ رہی ہیں، ان کے والد یوسف رضا گیلانی نے جب جنوبی پنجاب کو صوبہ بنانے کی بات کی تو انہیں نا اہل قرار دے دیا گیا مگر جنوبی صوبہ بن کر رہے گا۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ جنوبی پنجاب کے ساتھ زیادتی کی جا رہی ہے ایک وزیر اعظم کو نااہل قرار دیا گیا، جب وہاں سے مخدوم شہاب الدین کو اس عہدے کے لیے نامزد کیا گیا تو ان کے وارنٹ جاری کر دیے گئے اس کے علاوہ ایک سابق وفاقی وزیر حامد کاظمی کئی ماہ سے جیل میں ہیں۔

موسیٰ گیلانی کا کہنا تھا کہ وہ عدلیہ پر اعتماد اور احترام کرتے ہیں، جب ان سے یہ سوال کیا گیا کہ وہ سمجھتے ہیں کہ راجہ پرویز اشرف سوئس حکام کو خط لکھیں گے جو ان کے والد نے نہیں لکھا تو موسیٰ گیلانی نے اس پر تبصرہ کرنے سے انکار کیا۔

واضح رہے کہ سابق وزیر اعظم کے بیٹے کے ہمراہ وفاقی یا صوبائی حکومت کا کوئی وزیر یا مشیر موجود نہیں تھا تاہم وزارت قانون میں سرکاری عہدوں پر مقرر بعض شخصیات ضرور آس پاس نظر آئیں۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here