کراچی:تاجر کی ہلاکت پر تاجروں کی ہڑتال

Posted by on Jun 13, 2012 | Comments Off on کراچی:تاجر کی ہلاکت پر تاجروں کی ہڑتال

تنطیم کے رہنما عتیق میر کا کہنا ہے کہ انہوں نے حکومت کو بہتّر گھنٹے کا الٹی میٹم دیا تھا لیکن بھتّہ خوری اور بدامنی کے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہوئی اور اس کے برعکس ایک اور تاجر کو ہلاک کر دیا گیا۔

تاجروں کے اجلاس میں مطالبہ کیا گیا کہ ٹارگٹ کلنگ اور بھتّہ خوری میں ہلاک ہونے والے تاجروں کے لواحقین کو کم از کم دس لاکھ روپے فی کس زرِ تلافی ادا کیا جائے۔

تاجروں کا یہ بھی کہنا تھا کہ حکومت انہیں تحفظ فراہم کرنے میں ناکام رہی ہے۔ تاجروں کی تنظیم کے سربراہ عتیق میر نے مطالبہ کیا کہ ’آرمی چیف کراچی آئیں اور امن امان کی صورتحال کا از سر نو جائزہ لیں۔‘

منگل کو شہر میں ایک تاجر کی ہلاکت کے بعد چھوٹے تاجروں کی تنظیم آل کراچی تاجر اتحاد نے بھتہ خوری کے خلاف کاروبار بند رکھنے کا اعلان کیا تھا۔

پاکستان کے سب سے بڑے صنعتی اور تجارتی شہر کراچی میں تاجروں کی ہڑتال کی وجہ سے معمولات زندگی اور کاروباری سرگرمیاں معطل ہیں۔

متحدہ قومی موومنٹ اور ٹرانسپورٹ اتحاد نے بھی اس ہڑتال کی حمایت کی ہے، جس نے ہڑتال کو موثر بنانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

شہر میں دفاتر اور تمام چھوٹی بڑی مارکیٹوں اور بازاروں میں دکانوں بند ہیں۔

نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق سڑکوں اور شاہراہوں پر پبلک ٹرانسپورٹ نہ ہونے کے برابر ہے جبکہ لوگ ٹیکسی اور رکشہ میں سفر کر رہے ہیں۔

شہر میں ہڑتال سے قبل منگل کی شب تمام مارکیٹیں اور دکانیں وقت سے پہلے ویران ہو گئیں جبکہ پبلک ٹرانسپورٹ بھی سڑکوں سے غائب ہے۔ ہڑتال کے باعث کراچی تعلیمی بورڈ نے اپنے مجوزہ امتحانات ملتوی کردیے ہیں۔

اس سے پہلے منگل کو کراچی میں فائرنگ کے ایک واقعے میں ایم کیو ایم کے سابق رکن اسمبلی کے بھائی ہلاک ہوگئے تھے۔

ہلاکت کا واقعہ منگل کی دوپہر کو شیر شاہ مارکیٹ میں پیش آیا۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here