پیکج پر عمل کابینہ کی منظوری کے بعد

Posted by on Jun 07, 2011 | Comments Off on پیکج پر عمل کابینہ کی منظوری کے بعد

وزیراعظم پاکستان یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ کابینہ کے آئندہ اجلاس میں بلوچستان کے لیے اعلان کردہ آغاز حقوقِ بلوچستان پیکج پر بحث کے بعد اس صوبے میں ترقیاتی کاموں کی منظوری دی جائے گی۔

حکومت آغاز حقوق بلوچستان پیکج ان اعلانات کو قرار دیتی ہے جو پیپلز پارٹی کے برسر اقتدار آنے کے فورا بعد بلوچستان میں سیاسی احساس محرومی ختم کرنے کے لیے کیے گئے تھے لیکن ان پر ناقدین کے مطابق اب تک عمل نہیں کیا گیا ہے۔

کلِک آغازِ حقوقِ بلوچستان: مشترکہ اجلاس میں تجاویز پیش

کوئٹہ میں پریس کانفرنس کے دوران اس بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں وزیراعظم نے کہا کہ وہ کابینہ کے اگلے اجلاس میں اس پیکج کو زیربحث لائیں گے اور اس پیکج میں بلوچستان کے عوام کو جو سہولیات و مراعات دینے کا وعدہ کیا گیا ہے ان پر عمل کیا جائے گا۔

اس معاملے پر الزام تراشی نہیں کی جانی چاہیے کہ لاپتہ افراد کے معاملے میں کون ملوث ہے۔ اگر کسی کے پاس کوئی ثبوت ہے تو وہ عدالت کے سامنے پیش کرے۔ ہمیں ان افراد کے بارے میں تشویش ہے اور ہم عدالت سے اس بارے میں مکمل تعاون کر رہے ہیں

وزیراعظم گیلانی

یہ کابینہ کے اگلے اجلاس کا سنگل آئٹم ایجنڈا ہو گا۔ میں بلوچستان میں امن و امان کی صورتحال پر بھی اجلاس بلاں گا اور یہاں سیاسی حالات اور شہری آزادی کے حالات بہتر بنانے کے لیے آغاز حقوق بلوچستان پیکج پر بات کی جائے گی۔

وزیراعظم نے کہا کہ ان کے حالیہ دورہ بلوچستان کا مقصد صوبے میں امن عامہ کی صورتحال کا جائزہ لینا تھا اور مختلف لوگوں سے بریفنگ لے کر انہوں نے صورتحال کا ادراک کر لیا ہے۔

انہوں نے کہا میں نے وفاقی حکومت میں شامل وزرا سے بھی کہا ہے کہ وہ بھی اس صوبے کو خصوصی توجہ دیں اور ہر ہفتے ایک وفاقی وزیر کو بلوچستان کادورہ کرنا چاہیے۔

وزیراعظم نے کہا کہ بلوچستان کے لوگوں کو سرکاری ملازمتوں کا موقع دینے کے فیصلے پر عمل ہو رہا ہے اور اب تک بلوچستان کے پانچ ہزار شہریوں کو ملازمتیں دی جا چکی ہیں اور پندرہ ہزار مزید نوکریاں دی جائیں گی۔

بلوچستان سے مبینہ طور پر انٹیلی جنس اداروں کے ہاتھوں لاپتہ ہونے والے افراد کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ لاپتہ افراد کا معاملہ عدالت میں زیرسماعت ہے لہذا اس پر بات کرنا مناسب نہیں ہے۔

بلوچستان میں سیکنڑوں افراد کے لاپتہ ہوجانے کی شکایت عام ہے۔

اس معاملے پر الزام تراشی نہیں کی جانی چاہیے کہ لاپتہ افراد کے معاملے میں کون ملوث ہے۔ اگر کسی کے پاس کوئی ثبوت ہے تو وہ عدالت کے سامنے پیش کرے۔ ہمیں ان افراد کے بارے میں تشویش ہے اور ہم عدالت سے اس بارے میں مکمل تعاون کر رہے ہیں۔

بلوچستان میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے بارے میں انسانی حقوق کمیشن کی ایک رپورٹ سے متعلق پوچھے گئے سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ اس رپورٹ کے علاوہ ان کے پاس بعض دیگر ذرائع سے بھی انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں کی اطلاعات آتی ہیں اور وہ ان سب کی تحقیقات کروا رہے ہیں۔

پاکستان اور امریکہ کو مطلوب شدت پسند رہنما الیاس کشمیری کی ہلاکت کے بارے میں وزیراعظم نے کہا کہ امریکہ نے الیاس کشمیری کی ایک ڈرون حملے میں ہلاکت کی تصدیق کر دی ہے۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here