پناہ گزینوں میں دوگنا سے زیادہ اضافہ

Posted by on Jun 07, 2011 | Comments Off on پناہ گزینوں میں دوگنا سے زیادہ اضافہ

دنیا میں پناہ گزینوں پر نظر رکھنے والے عالمی ادارے کا کہنا ہے کہ سنہ 2010 کے دوران دنیا میں چار کروڑ بیس لاکھ سے زائد افراد کو گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہونا پڑا۔

ادارے کے مطابق یہ تعداد سنہ دو ہزار نو کے مقابلے میں دوگنا سے بھی زیادہ ہے۔

یہ بات انٹرنل ڈسپلیسمنٹ مانیٹرنگ سنٹر اور نارویجن ریفیوجی کونسل کی اس رپورٹ میں کہی گئی ہے جو اوسلو میں ماحولیاتی تبدیلی اور نقل مکانی کے موضوع پر منعقدہ اجلاس میں پیش کی گئی ہے۔

رپورٹ تیار کرنے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ اس اضافے کی ایک وجہ ماحولیاتی تبدیلی ہو سکتی ہے اور عالمی برادری کو اس پر قابو پانے کے لیے اقدامات کرنے چاہیئیں۔
سنہ 2009 کے سترہ ملین پناہ گزینوں کی تعداد سنہ 2010 میں بڑھ کر بیالیس ملین ہونے کی وجہ اس سال آنے والی بڑی قدرتی آفات مثلا چین اور پاکستان کے سیلاب اور چلی اور ہیٹی کے زلزلے ہیں۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اقوامِ متحدہ کے ہائی کمشنر برائے پناہ گزین انتونیوگتریس کا کہنا تھا کہ ماحولیاتی تبدیلیوں کے نتیجے میں نقل مکانی موجودہ دور کا ایک بڑا چیلینج ہے۔انہوں نے عالمی برادری پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دنیا ماحولیاتی تبدیلی کی رفتار کو کم کرنے کے لیے سیاسی عزم کا اظہار نہیں کر رہی ہے۔

انٹرنل ڈسپلیسمنٹ مانیٹرنگ سنٹر کا کہنا ہے کہ سنہ 2009 کے سترہ ملین پناہ گزینوں کی تعداد سنہ 2010 میں بڑھ کر بیالیس ملین ہونے کی وجہ اس سال آنے والی بڑی قدرتی آفات مثلا چین اور پاکستان کے سیلاب اور چلی اور ہیٹی کے زلزلے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق 2010 میں براعظم ایشیا آفات سے سب سے زیادہ متاثر ہوا اور اس کے نتیجے میں پاکستان، چین، انڈونیشیا، بنگلہ دیش، فلپائن اور بھارت جیسے ملک متاثر ہوئے۔

ادارے کا یہ بھی کہنا ہے کہ تباہیوں کے نتیجے میں ہونے والی نقل مکانی میں سے نوے فیصد کی وجہ موسمیاتی آفات جیسے کہ سیلاب اور طوفان تھے جو کہ ممکنہ طور پر عالمی حدت کی وجہ وجود میں آئے تھے۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here