میں پاکستان جاسوسی کرنےگیا تھا:سرجیت سنگھ

Posted by on Jun 28, 2012 | Comments Off on میں پاکستان جاسوسی کرنےگیا تھا:سرجیت سنگھ

اکستان کی جیلوں میں تیس سال سے زیادہ گزارنے کے بعد بھارتی شہری سرجیت سنگھ نے واہگہ کے راستے وطن واپس پہنچنے پر اعتراف کیا ہے کہ وہ جاسوسی کے لیے سرحد پار گئے تھے۔

لیکن اس سے پہلے کہ وہ مزید تفصیلات بتاتے سکیورٹی اہلکار انہیں اپنے ساتھ لے گئے۔ لیکن اس سے پہلے انہوں نے یہ ضرور کہا کہ ’حکومت کے خلاف مجھ سے کچھ مت پوچھو‘۔

بھارتی سرزمین پر صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ’میں آپ کو کیا بتاؤں، مجھ سے مت پوچھو، مجھ سے مت نکلواؤ۔ میں جاسوسی کے لیے گیا تھا۔‘

سرجیت سنگھ کو جاسوسی کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا اور انہیں پھانسی کی سزا سنائی گئی تھی جسے انیس سو نواسی میں عمر قید میں تبدیل کر دیا گیا تھا۔

انہوں نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ سربجیت سنگھ کو بھی جلد ہی رہا کردیا جائے گا۔ پاکستان میں وزارت داخلہ کے مشیر رحمان ملک نے بھی بدھ کو اسلام آباد میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ سربجیت کی رہائی کے لیے بھارتی درخواست پر ہمدردی سے غور کیا جائے گا اور قانون کے دائرے میں رہتے ہوئے جو کچھ بھی ممکن ہوگا وہ کیا جائے گا۔

منگل کے روز ان کی رہائی کا اعلان متنازع ہوگیا تھا کیونکہ میڈیا میں یہ خبر گردش کرنے لگی تھی کہ پاکستان نے سربجیت سنگھ کی سزا معاف کرکے انہیں رہا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سربجیت سنگھ پر بم دھماکوں میں ملوث ہونے کا الزام ہے اور انہیں بھی پھانسی کی سزا سنائی گئی ہے۔

لیکن بدھ کو پاکستان کے صدر آصف علی زرداری کے ترجمان فرحت اللہ بابر سے منسوب ایک بیان کے بعد یہ خبر آگ کی طرح پھیل گئی تھی کہ حکومت پاکستان نے سربجیت سنگھ کی سزا معاف کردی ہے۔ لیکن بعد میں مسٹر بابر نے وضاحت کی کہ سرجیت سنگھ کو رہا کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا کیونکہ وہ اپنی سزا پوری کرچکے ہیں اور سربجیت سنگھ کی رہائی کی خبر کسی غلط فہمی کی بنیاد پر چلائی جارہی تھی۔

بھارتی حکومت اور دونوں ملکوں میں سول سوسائٹی کے نمائندے لمبے عرصے سے سربجیت سنگھ کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر رہا کرنے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں۔

سرجیت سنگھ نے کہا کہ وہ سربجیت سنگھ سے اکثر ملتے تھے اور وہ بالکل ٹھیک ہیں۔ ’پاکستانی جیلوں میں بھارتی قیدیوں کو کوئی تکلیف نہیں ہے۔ وہاں کسی چیز کی کمی نہیں ہے۔‘

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here