لگتا تھا کہ کشتیاں جلا کر آئے ہیں

Posted by on Jun 13, 2012 | Comments Off on لگتا تھا کہ کشتیاں جلا کر آئے ہیں

چند دن قبل جب میں بحریہ ٹاؤن گئی تو اسے دنیا کے کسی بھی ترقی یافتہ ملک کی ہاؤسنگ سکیم کے مقابلے کی سکیم پایا۔

ملک ریاض کا بحریہ ٹاؤن جتنا پُر امن ہے، منگل کے روز اسلام آباد کے ایک عالی شان ہوٹل میں ہونی والی ان کی پریس کانفرنس اتنی ہی ہنگامہ خیز تھی۔

ملک ریاض کا بحریہ ٹاؤن جتنا پُر امن ہے، منگل کے روز اسلام آباد کے ایک عالی شان ہوٹل میں ہونی والی ان کی پریس کانفرنس اتنی ہی ہنگامہ خیز تھی۔

ملک ریاض کے آنے سے قبل کُھسر پُھسر ہو رہی تھی کہ اس پریس کانفرنس میں کیا انکشاف کیا جائے گا، کیا ملک ریاض ان صحافیوں کے بارے میں بتائیں گے جنہیں مبینہ طور پر انہوں نے رشوت دی۔ کیا وہ چیف جسٹس کے بیٹے ڈاکٹر ارسلان کے بارے میں مزید شواہد پیش کریں گے؟

تیوری چڑھائے، کھرب پتی ملک ریاض نے قرآن کا ایک نسخہ ہاتھ میں اٹھا رکھا تھا اور انہوں نے ڈاکٹر ارسلان کے بجائے، چیف جسٹس آف پاکستان افتخار محمد چودھری پر تابڑ توڑ حملے کیے لیکن ساتھ ہی ایک صحافی کے سوال پر انہوں نے کہا کہ وہ آج بھی چیف جسٹس آف پاکستان کی عزت کرتے ہیں۔

ملک ریاض تو چلے گئے لیکن وہاں موجود کچھ صحافی اس ہنگامہ خیز پریس کانفرنس کے اچانک اختتام سے مایوس نظر آئے تو وہیں کچھ کو یہ سب کچھ احمقانہ لگا۔

ایک انگریزی اخبار کے سینیئر رپورٹر نے کہا ’پورے کیرئیر میں میں نے اتنی احمقانہ پریس کانفرنس نہیں دیکھی‘۔

ایک رپورٹر نے صحافیوں کے برتاؤ پر تنقید کی تو یہ سوال بھی اٹھا کہ ’جب یہ معاملہ عدالت میں ہے تو ایسی پریس کانفرنس کرنا ملک ریاض کو زیب دیتا ہے‘۔

یہ سب سوال اپنی جگہ لیکن دیکھنا یہ ہے کہ اگلی پریس کانفرنس میں ملک ریاض اپنے ’انکشافات‘ کے بعد جواب دینے کے موڈ میں ہوں گے یا نہیں۔

صحافیوں کے ہجوم میں، میں دوسری خاتون تھی۔ ایک اور خاتون صحافی شیشے کے سامنے صوفے پر اپنی نوٹ بک تھامے بیٹھی تھیں۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here