جبری گمشدگیوں کے معاملے پر سنجیدہ ہیں

Posted by on Sep 12, 2012 | Comments Off on جبری گمشدگیوں کے معاملے پر سنجیدہ ہیں

پاکستان کی وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے کہا کہ جمہوری حکومت ملک میں جبری گمشدگیوں کے معاملے کو بہت سنجیدگی سے لے رہی ہے۔

وزیر خارجہ کے بقول اس معاملے کی طرف توجہ دینے کے لیے داخلی نظام کو مضبوط کرنے کے لیے تمام تر کوششیں کی جا رہی ہیں۔

وزارت خارجہ کی جانب سے منگل کو جاری ہونے والے بیان کے مطابق وزیر خارجہ نے ورکنگ گروپ کا خیر مقدم کیا اور انہیں ملک میں انسانی حقوق کے فروغ اور تحفظ کے لیے حکومت کی طرف سے کیے جانے والے اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا۔

وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے منگل کو جبری طور پر غائب کیے جانے والے افراد کے بارے میں اقوام متحدہ کے دو رکنی ورکنگ گروپ کے ساتھ ملاقات میں ان خیالات کا اظہار کیا۔

بیان کے مطابق اس دوران وہ حکومتی اہلکاروں اور گمشدہ افراد کے خاندان والوں کے علاوہ سول سوسائٹی کی تنظیموں اور اقوام متحدہ کے متعلقہ اداروں کے نمائیندوں سے ملاقاتیں کرے گا۔

خیال رہے کہ پاکستان کی وزارتِ خارجہ کی جانب سے پہلی بار جبری گمشدگیوں کے معاملے کو واضح الفاظ میں تسلیم کیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ وزیر خارجہ نے ورکنگ گروپ کو بتایا کہ اس مسئلے کی طرف توجہ دینے کے لیے خود مختار عدلیہ، آزاد میڈیا اور متحرک سول سوسائٹی قومی کوششوں میں ہراول دستہ ہیں۔

نامہ نگار ذوالفقار علی کے مطابق وزیر خارجہ نے اس امید کا اظہار کیا کہ ورکنگ گروپ اپنی رپورٹ میں پاکستان میں انسانی حقوق کے تحفظ کے لیےحکومت کے عزم اور خود مختار عدلیہ، آزاد میڈیا اور سول سوسائٹی کی کوششوں کی عکاسی کرے گا۔

بیان کے مطابق ورکنگ گروپ نے وزیر خارجہ کا شکریہ ادا کیا اور انسانی حقوق کے فروغ اور اس کے تحفظ کے لیےحکومت کے عزم کی تعریف کی۔

وزارت خارجہ کے بیان کے مطابق ورکنگ گروپ کے سربراہ اولیوئیے دی فروویل نے اس موقع پر کہا کہ ان کا مینڈیٹ گمشدہ افراد کے خاندانوں اور متعلقہ حکام کے درمیان پل کے طور پر کام کرنا ہے۔

بیان میں ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ یہ ورکنگ گروپ لاپتہ افراد کے بارے میں تحقیقات یا حقائق جمع کرنے والا مشن نہیں ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اپنے دورے کے دوران اقوام متحدہ کے یہ ماہرین ورکنگ گروپ کے پاس زیر التواء جبری طور پر غائب کیے گیے افراد کے کیسز کے بارے میں معلومات اکٹھی کریں گے۔

اس سے پہلے پیر کو اقوام متحدہ کا ورکنگ گروپ پاکستان کے دس روزہ دورے پر اسلام آباد پہنچا تھا۔ اس ورکنگ گروپ کے سربراہ اولیوئیے دی فروویل ہیں جبکہ عثمان الحاجی اس کے رکن ہیں۔

یہ ورکنگ گروپ حکومت کی دعوت پر پاکستان کا دورہ کر رہا ہے۔

اسلام آباد سے جاری ہونے والے اقوام متحدہ کے ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ یہ ورکنگ گروپ اپنے دس روزہ دورے کے دوران پاکستان کے مختلف حصوں کا دورہ کرے گا۔

بیان میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ اقوام متحدہ کے ماہرین حکومت کی طرف سے جبری طور پر غائب کیے جانے کے واقعات کی روک تھام اور اس کے خاتمے کے حوالے سے اٹھائے گئے اقدامات کا جائزہ بھی لے گا۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here