بھارتی فلموں کی امریکی مین سٹریم سینماگھروں میں نمائش

Posted by on Jun 28, 2012 | Comments Off on بھارتی فلموں کی امریکی مین سٹریم سینماگھروں میں نمائش

 

پچھلے چند برسوں میں امریکہ میں ہندی فلموں کے حوالے سے صورتھال تیزی سے بدلی ہے۔ ہالی وڈ کی چند فلموں نے یکے بعد دیگرے سو کروڑ سے زائد کا کاروبار کیا ، اور اسی چیز نے امریکی مین سٹریم سینما گھروں میں بھی ہندی فلموں کی نمائش کو آسان کردیا۔

 ایک زمانہ تھا جب امریکہ میں ہندی فلم دیکھنا ایک محال کام تھا۔ کہیں کہیں  دیسی سٹوروں پر ہندی فلمیں بھی بیچی جاتی تھیں، لیکن ان میں زیادہ تر پرانی فلمیں ہی ہوتی تھیں۔ پھر  کچھ نئے آنے والی فلمیں بھی آنے لگیں ، جو کرائے پر بھی مل جاتی تھیں لیکن ان کے کرائے 3 سے 5 ڈالر تک ہوتے تھے۔جو خاصے مہنگے پڑتے تھے۔ وقت نے کئی امریکی ریاستوں میں  کچھ ہندی سیمنا گھر بھی قائم کردیے جہاں نئی فلموں کی نمائش کی جاتی تھی ۔ لیکن یہ سینما گھر چونکہ صرف ہندی فلموں کے لیے تھے اس لیے  نہایت چھوٹے اور کم تھے۔ ہر سینما گھر میں زیادہ سے زیادہ ایک وقت میں 2 سکرینز ہی ہوتیں تھیں اور دو فلمیں ہی نمائش کے لیے پیش کی جا سکتی تھیں۔ ان سینما گھروں کی حالت بھی کچھ خاص اچھی نہیں ہوتی تھی۔ اور ان میں سہولتیں بھی بہت کم ہوتی تھیں۔

لیکن پچھلے چند  برسوں میں امریکہ میں ہندی فلموں کے حوالے سے صورتھال تیزی سے بدلی ہے۔ ہالی وڈ کی چند  فلموں نے یکے بعد دیگرے  سو  کروڑ سے زائد  کا کاروبار کیا ، اور اسی چیز نے امریکی مین سٹریم سینما گھروں میں بھی ہندی فلموں کی نمائش  کو آسان کردیا۔ اب امریکہ میں مین سٹریم ملٹی پلیکس سینما گھروں میں   بالی وڈ فلموں یا ہندی فلموں  نے اپنی جگہ بنانی شروع کر دی ہے۔ اس کی ایک اور وجہ کئی امریکی ریاستوں کے بڑے شہروں میں تیزی سے برھتی ہوئی جنوبی ایشیائی باشندوں کی تعداد بھی ہے ۔ جن میں بھارتی اور پاکستانی سب سے زیادہ ہیں۔

امریکی سینما گھروں میں بالی وڈ فلموں کی نمائش سے مقامی جنوبی ایشیائی کمیونٹی کا کیا رد عمل ہے  یہ معلوم کرنے کی کوشش ہمیں  واشنگٹن کے قریب واقع  ایک امریکن سینما گھر ریگل تھیٹرز  میں لے گئی جہاں حال میں ریلیز ہونے والی فلم فیراری کی سواری کا  پریمیئر تھا۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here