اکبر بگٹی کیس: جام یوسف کی عبوری ضمانت منظور

Posted by on Jul 17, 2012 | Comments Off on اکبر بگٹی کیس: جام یوسف کی عبوری ضمانت منظور

بلوچستان ہائیکورٹ نے نواب اکبر بگٹی کے مقدمہ قتل میں سابق وزیر اعلٰی بلوچستان جام محمد یوسف کی عبوری ضمانت منظور کر کے محکمہ داخلہ اور متعلقہ حکام کو اس بارے میں نوٹس جاری کر دیئے ہیں۔

جس پر جام یوسف کے وکیل ایاز ایڈوکیٹ نے کہا کہ کالعدم تنظیم بلوچ لبریشن آرمی نے دھمکی دی تھی کہ وہ جام محمد یوسف کو کہیں بھی قتل کردیں گے، اس پر عدالت نے کہا کہ یہ بی ایل اے کیا ہے اور کیا انہوں نے اس کےخلاف کوئی ایف آئی آر درج کرائی تھی؟

 سابق وزیر اعلٰی جام محمد یوسف نے اکبر بگٹی قتل کیس میں ضمانت قبل از گرفتاری کے لیے درخواست دائر کر رکھی تھی۔ جس کی سماعت بلوچستان ہائیکورٹ کے جسٹس جمال خان مندوخیل اور جسٹس غلام مصطفی پر مشتمل بینچ نے پیر کے روز کوئٹہ میں کی۔ اسی طرح عدالت نے جام یوسف کے وکیل کو دس دس لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کرانے کی ہدایت بھی کی۔

سماعت کے دوران ریمارکس دیتے ہوئے جسٹس جمال خان مندوخیل نے کہا کہ یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ آپکے صوبے میں کارروائی ہو رہی ہو اور صوبائی چیف ایگزیکٹیو کو پتہ نہ ہو۔

انہوں نے سابق وزیراعلی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر اس بارے میں آپکو اعتماد میں نہیں لیا گیا تو آپ احتجاجاً مستعفی ہو جاتے۔ عدالت نے مزید کہا کہ اب لوگوں کو سمجھ جانا چاہیے کہ آمر کا ساتھ دینے کے کیا نتائج برآمد ہوتے ہیں۔

اس سے قبل جام یوسف کے وکیل نے عدالت میں مؤقف اختیار کیا کہ نواب اکبر بگٹی کے خلاف ہونے والی کارروائی فوجی تھی اور یہ اس وقت کے فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کے کہنے پر ہوئی تھی اور ایسے شواہد موجود نہیں ہیں جن سے ثابت ہو کہ ان کے مؤکل جام محمد یوسف اُس کارروائی میں شامل تھے۔

جسٹس جمال خان مندوخیل نے مزید کہا کہ ایف آئی آر دسمبر دو ہزار دس میں درج ہوئی اور آپ دو سال بعد عدالت سے عبوری ضمانت کے لیے رجوع کر رہے ہیں، اس کا مطلب یہ ہے کہ آپ نے جان بوجھ کر عدالتی احکامات کو نظر انداز کیا۔

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here