اولمپکس کے مزید دو لاکھ ٹکٹ دستیاب

Posted by on Jul 17, 2012 | Comments Off on اولمپکس کے مزید دو لاکھ ٹکٹ دستیاب

ندن اولمپکس کے منتظمین نے جہاں فٹبال مقابلوں کے پانچ لاکھ ٹکٹ فروخت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے وہیں ان مقابلوں کے آغاز سے دس دن قبل دیگر کھیلوں کے مزید دو لاکھ ٹکٹ فروخت کے لیے پیش کر دیے گئے ہیں۔

منتظمین کے مطابق اب تک جاری کیے جانے والے ٹکٹوں میں سے بھی پچاس ہزار ٹکٹ فروخت نہیں ہو سکے ہیں اور مزید دو لاکھ ٹکٹ رواں ہفتے آن لائن فروخت کے لیے پیش کیے جائیں گے۔

فٹبال میچوں کے ٹکٹ فروخت نہ کرنے کی وجہ لندن کے ویمبلے سٹیڈیم سمیت پانچ سٹیڈیمز کی گنجائش میں کمی کرنے کا فیصلہ بتائی گئی ہے۔

اس منصوبے کے تحت کارڈف کے ملینیئم سٹیڈیم کی بالائی نشستوں تک رسائی برطانیہ کے دو میچوں سمیت تمام میچوں کے لیے بند رہے گی۔

’یہ لندن 2012 کے سلسلے میں ایک غیر معمولی انکشاف ہے‘ کہ اب بھی اتنے ٹکٹوں کی فروخت باقی ہے۔

لندن اولمپکس میں کھیلوں کا آغاز افتتاحی تقریب سے دو دن قبل پچیس جولائی کو برطانیہ اور نیوزی لینڈ کی خواتین کی فٹبال ٹیموں کے میچ کے ساتھ ہو جائے گا۔

لندن 2012 کے چیئرمین سباسٹیئن کو نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’اس میچ کے لیے چالیس ہزار سے کم ٹکٹ فروخت ہوئے ہیں‘۔

“اس وقت لاکھوں برطانوی شہریوں کے ہاتھ میں اولمپکس کے ٹکٹ ہیں اور ہم نے آغاز میں یہی وعدہ کیا تھا۔ بیس لاکھ افراد نے ٹکٹوں کے حصول کے لیے درخواستیں دیں اور ہم ابتداء سے یہ واضح کر چکے تھے کہ مزید ٹکٹ بعدازاں دستیاب ہوں گے۔”

لارڈ سباسچین کو

سباسٹیئن کو نے بتایا کہ وہ فروخت نہ ہونے والے ٹکٹوں کو ہر ممکن طریقے سے فروخت کرنے کی کوشش کریں گے۔

اس وقت بھی اولمپکس میں ایتھلیٹکس، ہاکی اور بیچ والی بال مقابلوں کے علاوہ افتتاحی اور اختتامی تقریب کے مہنگے ٹکٹ دستیاب ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ٹکٹوں کی کم فروخت کا امکان ہمیشہ سے موجود تھا۔ انہوں نے کہا کہ ’یہ ہمیشہ سے ایک چیلنج رہا ہے۔ یہاں بہت سے وینیوز اور بہت سے میچ ہیں اور آپ کو بہت دیر میں پتہ چلتا ہے کہ (اہم مقابلوں میں) کون سی ٹیم کس کے مدِمقابل ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ ’اس وقت لاکھوں برطانوی شہریوں کے ہاتھ میں اولمپکس کے ٹکٹ ہیں اور ہم نے آغاز میں یہی وعدہ کیا تھا۔ بیس لاکھ افراد نے ٹکٹوں کے حصول کے لیے درخواستیں دیں اور ہم ابتداء سے یہ واضح کر چکے تھے کہ مزید ٹکٹ بعدازاں دستیاب ہوں گے۔‘

Advertisement

Subscription

You can subscribe by e-mail to receive news updates and breaking stories.

————————Important———————–

Enter Analytics/Stat Tracking Code Here